ڈُکھ اندر دا مکھ اتے لکھیا کھڑا ہے

اختر عباس دی سرائیکی نظم، اردو ترجمے دے نال

ڈُکھ اندر دا مکھ اتے لکھیا کھڑا ہے
ہک لکاواں باب اج کھلیا کھڑا ہے

اندر کا دُکھ چہرے پہ لکھا پڑا ہے
ایک پوشیدہ باب آج کُھلا پڑا ہے

دور تھی کیں وی ایہومحسوس تھئے
او تاں ساڈے خون وچ گھلیا کھڑا ہے

دور ہوکر بھی یہی محسوس ہوا
وہ تو ہمارے خون میں گُھلا پڑا ہے

بس اجڑ گئیں نال کئی کتنا ٹُرے
اج تاں سایا وی پرے ہٹیا کھڑا ہے

بس اجڑے گئے ہوں جو اُن کے ساتھ کوئی کتنا چلے
آج تو سایہ بھی زرا دور ہٹ کے کھڑا ہے

توں وی ہانویں نال میڈے باغ وچ ؟
خواب پچھلی رات دا بھلیا کھڑا ہے

تم بھی تو تھے ساتھ میرے باغ میں
خواب پچھلی رات کا بھولا پڑا ہے

میں وی اج بیزار ہاں جیونڑ کنوں
او وی میڈے قتل تے تلیا کھڑا ہے

میں بھی آج بے زار ہوں جینے سے
وہ بھی میرے قتل کو تیار کھڑا ہے

رب ہمیشہ تانگھ وچ ہوندے میاں
رب دا بوہا ہر گھڑی کھلیا کھڑا ہے

رب ہمیشہ انتظار میں ہوتا ہے میاں
رب کا در ہر گھڑی کُھلا پڑا ہے

—- انتخاب از عامر حسینی

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s